سالوں کی جدوجہد، سالوں کی باتیں ؛ مسلم لیگ (ن) امریکہ کی وزیر اعظم نواز شریف سے ملاقات کےلئے تیاریاں

Sep 19, 2013| Courtesy by : pn.com.pk

9809191664_9441af1962_z

نیویارک (سپیشل رپورٹر سے ) چودہ سال قبل 1999میں جنرل (ر) پرویز مشرف کی جانب سے نوا ز شریف کی حکومت کا تختہ الٹنے کے بعد اقوام متحدہ سمیت مختلف اہم امریکی مقامات پر صدائے احتجاج بلند کرنے والے پاکستان مسلم لیگ (ن) یو ایس ا ے کے عہدیداران اس سال اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اجلاس کے موقع پر ایک بار پھر نیویارک میں اکٹھے ہونگے لیکن اس بار احتجاج کےلئے نہیں بلکہ اپنے لیڈر میاں نواز شریف کے پرتپاک استقبال اور پذیرائی کے لئے اکٹھے ہوں گے ۔

 


لیگی عہدیداران و کارکنان صدر پاکستان مسلم لیگ (ن) یو ایس اے روحیل ڈار کی قیادت میں چودہ سال کے بعد میاں نواز شریف کی بطور وزیر اعظم آمد انہیں پرتپاک انداز میں خوش آمدید کہنے اور ان کی مختلف تقریبات میں شرکت کے سلسلے میں بھرپور تیاریاں کررہے ہیں ۔ اس سلسلے میں مسلم لیگ ہاوس نیویارک میں مسلسل پارٹی کے رسمی و غیر رسمی اجلاس جاری ہیں جن میں ان تیاریوں کو حتمی شکل دی جارہی ہے ۔


پاکستان قونصلیٹ نیویارک اور پاکستان مشن یو ایس اے کے حکام بھی مسلسل روحیل ڈار، کیپٹن (ر) خالد شاہین بٹ سمیت دیگرلیگی عہدیداران اور کمیونٹی کی مختلف اہم شخصیات کے ساتھ روابط قائم رکھتے ہوئے وزیر اعظم کی نیویارک میں مختلف شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والی اہم شخصیات سے ملاقات کو حتمی شکل دے رہے ہیں ۔


معلوم ہوا ہے کہ وزیر اعظم نوا ز شریف پچیس ستمبر کو نیویارک کے مقامی ہوٹل میں دئیے جانیوالے ایک استقبالیہ میں پانچ سو سے زائد کمیونٹی کی اہم شخصیات اور ارکان کے ساتھ ملاقات کریں گے ۔

 

یہ بھی معلوم ہوا ہے کہ وزیر اعظم میاں نواز شریف ، پاکستان مسلم لیگ (ن) امریکہ کے ساتھیوں سے کمیونٹی استقبالیہ کے علاوہ بھی ملاقات کریں گے تاہم اس ملاقات کو ابھی حتمی شکل دی جا رہی ہے ۔ وزیر اعظم کے وفد میں شامل وزیر خزانہ سینیٹر اسحاق ڈار لیگی ساتھیوں کی وزیر اعظم سے ملاقات کے اہتمام میں کردار ادا کریں گے۔

 

پاکستان مسلم لیگ (ن) یو ایس اے کے عہدیداران کی خواہش اور کوشش ہو گی کہ وہ میاں نواز شریف کو اپنی اور اپنے دل کی جس حد تک ممکن ہو باتیں بتائیں بالخصوص اس جدوجد سے آگاہ کریںکہ جو وہ امریکہ میں ایک دہائی سے زائد عرصے سے کرتے رہے ہیں ۔

 


 

پاکستان مسلم لیگ (ن) امریکہ میں موجود بیشتر ساتھی وہ ہیں کہ جو اس وقت نواز شریف کے ساتھ کھڑے ہوئے کہ جب سب ان کا ساتھ چھوڑ گئے ۔ ان میں سے بعض ساتھی گذشتہ سال ہونے والے الیکشن میں پارٹی چھوڑ کر تحریک انصاف میں شامل ہو گئے۔

 

اور بعض ساتھی ایسے بھی تھے کہ جن کی نواز شریف سے ملنے اور ان کی کامیابی کا دن دیکھنے کی ہمیشہ خواہش رہی لیکن ان لیگی عہدیداروں جن میں چوہدری صلاح الدین ،بشیر کھوکھر، قربان علی شاہ ، امین خان منی بھائی اور احسا ن پاشا شامل رہے ہیں ، کے ساتھ ان کی زندگی نے وفا نہ کی اور وہ نواز شریف کو امریکہ میں خوش آمدید کہنے سے پہلے دنیائے فانی سے ہی رخصت ہو گئے تاہم ان ساتھیوں کی خدمات سے پاکستان مسلم لیگ (ن) امریکہ کے صدر روحیل ڈار ، میاں نواز شریف کو آگاہ کریں گے ۔

 


میاں نواز شریف کے ساتھ وفد میں وفاقی وزراءاسحاق ڈار، خواجہ آصف، احسن اقبال ،سرتاج عزیز اور طارق فاطمی سمیت دفتر خارجہ کے اہم حکام بھی نیویارک23اکتوبر کو پہنچ رہے ہیں ۔

 

نیوجرسی سے تعلق رکھنے والی بیگم شکیلہ لقمان ، جو امریکی شہریت چھوڑ کر پاکستان گئیں اور مخصوص نشستوں پر رکن قومی اسمبلی بنیں ، بھی امریکہ پہنچ گئی ہیں اور وزیر اعظم کی جنرل اسمبلی کے دورے میں شامل ہوں گی ۔مسلم لیگ (ن) امریکہ کے سیکرٹری انفارمیشن سید انور شاہ واسطی وزیر اعظم نواز شریف کی آمد سے قبل پاکستان کا دور ہ مکمل کرکے نیویارک واپس پہنچ گئے ہیں ۔

 

 

پاکستان مسلم لیگ (ن ) امریکہ کے صدر روحیل ڈار کا کہنا ہے کہ یہ ہمارے لئے فخر کی بات ہے کہ گذشتہ ایک دہائی سے زائد عرصے سے ہم جو محنت اور جدوجہد کررہے تھے ، اس میں ہم سرخرو ہوئے ۔ہمارے لئے اس سے خوشی کی بات کوئی نہیں کہ میاں نواز شریف کو ان کا مقام ملا اور پاکستان میں حقیقی جمہوریت بحال ہوئی ۔ انہوں نے کہا کہ انشاءاللہ میاں نواز شریف کے دور میں نہ صرف اقوام عالم میں پاکستان کا وقار بلند ہوگا بلکہ اوورسیز پاکستانیوں کی خدمات کو بھی ہر ممکن خراج تحسین پیش کیا جائیگا اور ان کی ملک و قوم میں ترقی میں حصے کے لئے اقدام کئے جائیں گے ۔

 

روحیل ڈار نے کہا کہ میں اپنے تمام ساتھیوں کا مشکور ہوں کہ جو گذشتہ پندرہ سالوں سے ایک سیسہ پلائی دیوار کی طرح کھڑے رہے اور انہوں نے حق و سچ کا ساتھ دیا۔

 

وزیر اعظم میاں نواز شریف جنرل اسمبلی کے اجلاس میں شرکت کے بعد اکتوبر میں دوبارہ صدر اوبامہ کی دعوت پر واشنگٹن ڈی سی کا دورہ کریں گے۔ روزنامہ ڈان کی رپورٹ کے مطابق سٹیٹ ڈیپارٹمنٹ کے اعلیٰ حکام کا کہنا ہے کہ صدر اوبامہ ، وزیر اعظم شریف سے تفصیلی ملاقات کریں گے ۔ یہ ملاقات اکتوبر کے آخری ہفتے میں یا نومبر کے پہلے ہفتے میں ہو گی ۔

 

 

ان حکام کا کہنا ہے کہ برازیل کے صدر کے دورہ امریکہ منسوخ کرنے کے فیصلے کی وجہ سے اکتوبر میں صدر اوبامہ کے پاس ملاقات کا وقت موجود ہے اور اسلام آباد اور واشنگٹن دونوں قائدین کی ملاقات کے انتظام کی تیاریاں کررہے ہیں۔

 

نیو یارک میں نواز، اوباما ملاقات نہیں ہو گی

 

 

دفترخارجہ کے ترجمان اعزاز احمد چوہدری نے اسلام آباد میں ہفتہ وار بریفنگ کے دوران بتایا کہ تاہم وزیر اعظم سیشن کے موقع پر وقت کی کمی کے باعث امریکی صدر بارک اوباما سے ملاقات نہیں کر سکیں گے۔

دفتر خارجہ کے ترجمان اعزاز احمد چوہدری نے کہا کہ امریکا اور پاکستان وزیراعظم نوازشریف اور امریکی صدر باراک اوبامہ کے درمیان ملاقات کے لیے آپس میں رابطے میں ہیں ۔

انہوں نے بتایا کہ نواز شریف 27 ستمبر کو وہ اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے خطاب کریں گے جہاں وہ پاکستان کی خارجہ پالیسی کے رہنمااصول، مختلف علاقائی اور عالمی امور پر پاکستان کے موقف اور داخلی ترجیحات سے آگاہ کریں گے۔

 

اعزاز احمد چوہدری نے جنرل اسمبلی سے خطاب میں وزیراعظم دہشت گردی کی لعنت پرقابوپانے اور خطے میں استحکام کے لیے موجودہ حکومت کی کوششوں پر بھی روشنی ڈالیں گے۔

 

ترجمان دفتر خارجہ کے مطابق نیویارک میں قیام کے دوران وزیراعظم مختلف عالمی رہنماؤں کے ساتھ ملاقاتیں بھی کریں گے اور دوطرفہ اور علاقائی ایشوز پر تبادلہ خیال کرینگے

 

دریں اثناء اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل بان کی مون نے کہا ہے کہ پاک بھارت تعلقات کی بہتری کامعاملہ میرے ایجنڈے میں سرفہرست ہے۔

 

انہوں نے کہاکہ پاک بھارت لائن آف کنٹرول پرحالیہ کشیدگی اور فائرنگ کے واقعات پر تشویش ہے،امید ہے کہ جنرل اسمبلی کے اجلاس کے موقع پرپاک بھارت وزرائے اعظم ایل اوسی کشیدگی کا حل نکال لیں گے۔

 

انھوں نے مزید کہاکہ پاک بھارت مذاکرات کی حمایت اورتعاون جاری رکھیں گے، دونوں ملکوں کی قیادت ایل اوسی پربات چیت کرکے اسکاحل نکالنا چاہیے

 

– See more at: http://pn.com.pk/details_ur.php?uid=7584#sthash.l0R2rJAw.dpuf