وزیراعظم کی روضہ رسول پر حاضری‘ ملکی سلامتی‘ دہشت گردی سے نجات کیلئے دعائیں

Aug 05, 2013

news-1375656902-9617جدہ (این این آئی+ثناءنیوز+اے پی اے) وزیراعظم نوازشریف کی جدہ میں پاکستان جرنلسٹ فورم سے بات چیت کی مزید تفصیلات کے مطابق وزیراعظم نے کہا پاکستان اور بھارت جب تک اسلحہ کی دوڑ میں توازن پیدا نہیں کرتے اسوقت تک علاقائی امن کو خطرہ رہے گا ¾ پاکستان اور بھارت کو تنازعات کے حل کیلئے سنجیدہ کوششیں کرنی چاہئیں، پاکستان تمام ہمسایہ ممالک سے اچھے تعلقات چاہتا ہے، ترقی اور خوشحالی امن کے بغیرممکن نہیں۔ نوازشریف نے کہا توانائی بحران کے حل کیلئے حکمت عملی طے کرلی ہے 3 سے 4 سال میں بجلی کی طلب اور رسد میں فرق ختم کر دیں گے اور عوام کو بلا تعطل بجلی فراہم کی جاسکے گی۔ انہوں نے کہا جغرافیائی محل وقوع کے لحاظ سے آنے والے وقت میں گوادر خطے کا معاشی اور تجارتی مرکز بنے گا اس سلسلے میں حکومت نے گوادر کاشغر تجارتی راہداری کے قیام کا منصوبہ بنایا ہے جس پر جلد ہی کام شروع ہوجائے گا۔ اس منصوبے سے پاکستان اور چین کے علاوہ بھارت، افغانستان سمیت وسطی ایشیائی ریاستوں کو بہت فائدہ ہوگا۔ نواز شریف نے کہا پاکستان اپنے پڑوسی ممالک کے ساتھ اچھے تعلقات چاہتا ہے کیونکہ ترقی اور خوشحالی امن کے بغیرممکن نہیں اور اس سلسلے میں پاکستان اور بھارت دونوں کو تنازعات کے حل کےلئے سنجیدہ کوششیں کرنا ہوں گی دونوں ملکوں کو عوام کے معیار زندگی میں بہتری کو ترجیح دینا ہوگی اس سلسلے میں امریکہ اور روس کی طرح پاکستان اور بھارت بھی اپنے دفاعی بجٹ میں کمی لاسکتے ہیں۔ ثناءنیوز کے مطابق نوازشریف نے کہا پاکستان اور بھارت کو ہتھیاروں کی دوڑ میں توازن لانا ہوگا وگرنہ خطے میں امن و سلامتی کے حوالے سے خدشات موجود رہیں گے دونوں ممالک کو ہتھیاروں پر بھاری رقم خرچ کرنے کی بجائے سماجی انفراسٹرکچر پر خصوصی توجہ دینی چاہئے۔ اے پی اے کے مطابق نوازشریف نے کہا پاکستان اور بھارت جب تک اسلحہ کی دوڑ میں توازن پیدا نہیں کرتے، علاقائی امن کو خطرہ رہے گا۔ انہوں نے کہا اس وقت ملک کو درپیش سب سے بڑا بحران توانائی کا ہے جس کے لئے حکمت عملی طے کر لی ہے۔ انہوں نے کہا وہ ایک صوبے یا جماعت کے نہیں پورے ملک کے وزیراعظم ہیں غوام کو متحد رکھنا ان کا اولین فرض ہے۔